RSS

نماز قرآن میں

17 Mar

 

شروع الله کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے

نماز قرآن میں

 

وہ (خدا سے ڈرنے والے)لوگ ایسے ہیں کہ یقین لاتے ہیں چُھپی ہوئی چیزوں پر اور قائم رکهتے ہیں نماز کو اور جو کچھ دیا ہے ہم نے اُن کو اس میں سے خرچ کرتے ہیں۔ (سورة البَقَرَة ۳)

(2-Surah Al-Baqara : Ayah 3)

 

اورقائم کرو تم لوگ نماز کو (یعنی مسلمان ہو کر) اور دو زکوٰة کو اور عاجزی کرو عاجزی کرنیوالوں کے ساتھ ۔ (سورة البَقَرَة ۴۳)

(2-Surah Al-Baqara : Ayah 43)

 

اور (اگرتم کوحب مال و جاہ کےغلبہ سے ایمان لانا دشوارمعلوم ہوتو) مدد لو صبر اور نماز سے اور بےشک وہ نمازدشوار ضرور ہے مگر جن کے دلوں میں خشوع ہے ان پر کچھ دشوارنہیں ۔ (سورة البَقَرَة ۴۵)

(2-Surah Al-Baqara : Ayah 45)

 

اور جب ہم نے بنی اسرائیل سے عہد لیا کہ الله کے سوا کسی کی عبادت نہ کرنا اور ماں باپ اور رشتہ داروں اور یتیموں اور محتاجوں سے اچھا سلوک کرنا اور لوگوں سے اچھی بات کہنا اور نماز قائم کرنا اور زکوةٰ دینا پھر سوائے چند آدمیوں کے تم میں سے سب منہ موڑ کر پھر گئے (سورة البَقَرَة ۸۳)

(2-Surah Al-Baqara : Ayah 83)

 

اور (سرِدست صرف) نمازیں پابندی سے پڑھے جاوٴ اور جو نیک کام بھی اپنی بھلائی کے واسطے جمع کرتے رہو گے حق تعالیٰ کے پاس (پہنچکر) اس کو پالو گے کیونکہ الله تعالیٰ تمھارے سب کیے ہوئے کاموں کو دیکھ بھال رہے ہیں۔ (سورة البَقَرَة ۱۱۰)

(2-Surah Al-Baqara : Ayah 110)

 

اور جس جگہ سے بھی (کہیں سفر میں) آپ باہر جاویں تو(بھی) اپنا چہرہ (نماز میں) مسجدِ حرام (یعنی کعبہ) کی طرف رکھا کیجیے․ اور یہ (حکم عام قبلہ کا)بالکل حق ہے (اور) آپ کے پروردگار کی طرف سے ہے اور الله تعالیٰ تمھارے کیے ہوئے کاموں سے اصلاً بےخبر نہیں۔ (۱۴۹) اور (مکرر کہا جاتا ہے کہ) آپ جس جگہ سے بھی (سفر میں)باہر جاویں اپنا چہرہ مسجدِ حرام کی طرف رکھئیے اور تم لوگ جہاں کہیں (موجود) ہو اپنا چہرہ اسی کی طرف رکھا کرو تاکہ (ان مخالف) لوگوں کو تمھارے مقابلہ میں گفتگو (کی مجال) نہ رہے․ مگر ان میں جو (بالکل ہی) بےانصاف ہیں تو ایسے لوگوں سے (اصلاً) اندیشہ نہ کرو اور مجھ سے ڈرتے رہو․ اور تاکہ تم پر جو (کچھ) میرا انعام ہے اُس کی تکمیل کر دوں اور تاکہ (دنیا میں)تم راہِ راست (حق) پر رہو۔ (سورة البَقَرَة ۱۴۹۱۵۰)

(2-Surah Al-Baqara : Ayah 149-150)

 

اے ایمان والو!صبر اور نماز سے سہارا حاصل کرو بلاشبہ حق تعالیٰ صبر کرنے والوں کے ساتھ رہتے ہیں(اور نماز پڑھنے والوں کے ساتھ تو بدرجہٴ اولیٰ)۔ (سورة البَقَرَة ۱۵۳)

(2-Surah Al-Baqara : Ayah 153)

 

کچھ سارا کمال اسی میں نہیں (آگیا) کہ تم اپنا منہ مشرق کو کرلو یا مغرب کو لیکن (اصلی) کمال تو یہ ہے کہ کوئی شخص الله تعالیٰ پر یقین رکھے اور قیامت کے دن پر اور فرشتوں پر اور (سب) کتب (سماویہ) پر اور پیغمبروں پراور مال دیتا ہو اس (الله) کی محبت میں رشتہ داروں کو اور یتیموں کواور محتاجوں کو اور (بےخرچ) مسافروں کو اور سوال کرنے والوں کو اور گردن چھڑانے میں اور نماز کی پابندی رکھتا ہو اور زکوٰةبھی ادا کرتا ہو اور جو اشخاص (ان عقائد و اعمال کے ساتھ یہ اخلاق بھی رکھتے ہوں کہ) اپنے عہدوں کو پوراکرنے والے ہوں جب عہد کرلیں اور وہ لوگ مستقل رہنے والے ہوں تنگدستی اور بیماری میں اور قتال میں یہ لوگ ہیں جوسچّے (کمال کے ساتھ موصوف)ہیں اور یہی لوگ ہیں جو (سچّے) متقی (کہے جاسکتے) ہیں۔ (سورة البَقَرَة ۱۷۷)

(2-Surah Al-Baqara : Ayah 177)

 

محافظت کرو سب نمازوں کی (عموماً) اور درمیان والی نماز کی (خصوصاً) اور کھڑے ہوا کرو الله کے سامنے عاجز بنے ہوئے۔ (۲۳۸) پھر اگر تم کو اندیشہ ہو تو کھڑے کھڑے یا سواری پر چڑھے چڑھے (پڑھ لیا کرو) پھر جب تم کو اطمینان ہوجاوے تو تم خدا تعالیٰ کی یاد اس طریق سے کرو کہ جو تم کو سکھلایا ہے جس کو تم نہ جانتے تھے۔ ( سورة البَقَرَة ۲۳۸-۲۳۹)

(2-Surah Al-Baqara : Ayah 238-239)

 

بیشک جو لوگ ایمان لائے اور انہوں نے نیک کام کیے اور (بالخصوص) نماز کی پابندی کی اور زکوٰة دی ان کے لیے ان کا ثواب ہوگا ان کے پروردگار کے نزدیک اور (آخرت میں) ان پر کوئی خطرہ نہیں ہوگا اور نہ وہ مغموم ہونگے۔ (سورة البَقَرَة ۲۷۷)

(2-Surah Al-Baqara : Ayah 277)

 

(اور وہ لوگ) صبر کرنے والے ہیں اور راست باز ہیں اور (الله کے سامنے) فروتنی کرنے والے ہیں اور (مال) خرچ کرنے والے ہیں اور اخیر شب میں (اُٹھ اُٹھ کر) گناہوں کی معافی چاہنے والے ہیں۔ (سورة آل عِمرَان ۱۷)

(3-Surah Al-E-Imran : Ayah 17)

 

اور جب تم زمین میں سفر کرو سو تم کو اس میں کوئی گناہ نہ ہوگا (بلکہ ضروری ہے)کہ تم نماز کو کم کردو اگر تم کو یہ اندیشہ ہوکہ تم کو کافر لوگ پریشان کریں گے بلاشبہ کافر لوگ تمھارے صریح دشمن ہیں۔ (۱۰۱) اور جب آپ ان میں تشریف رکھتے ہوں پھر آپ ان کو نماز پڑھاناچاہیں تو یوں چاہیے کہ ان میں سے ایک گروہ تو آپ کے ساتھ کھڑے ہوجاویں اور وہ لوگ ہتھیار لے لیں پھر جب یہ لوگ سجدہ کرچکیں تو یہ لوگ تمھارے پیچھے ہوجاویں اور دُوسرا گروہ جنہوں نے ابھی نماز نہیں پڑھی،آجاوے اورآپ کے ساتھ نماز پڑھ لیں اور یہ لوگ بھی اپنے بچاؤ کا سامان اور اپنے ہتھیار لے لیں کافر لوگ یوں چاہتے ہیں کہ اگر تم اپنے ہتھیاروں اور سامانوں سے غافل ہوجاوٴتو تم پر ایکبارگی حملہ کر بیٹھیں اور اگر تم کو بارش کیوجہ سے تکلیف ہو یا تم بیمار ہو تو تم کو اس میں کچھ گناہ نہیں کہ ہتھیار اُتار رکھو اور اپنا بچاوٴ لے لو بلاشبہ الله تعالیٰ نے کافروں کیلئے سزا اہانت آمیز مہیا کررکھی ہے۔ (۱۰۲) (سورة النِّسَاء ۱۰۱ – ۱۰۲)

(4-Surah  An-Nisa : Ayah 101-102)

 

اے ایمان والو جب تم نماز کو اُٹھنے لگو تو اپنے چہروں کو دھووٴاور اپنے ہاتھوں کوبھی کہنیوں سمیت اور اپنے سروں پر ہاتھ پھیرواور(دھووٴ) اپنے پیروں کو بھی ٹخنوں سمیت۔اور اگر تم جنابت کی حالت میں ہوتو سارابدن پاک کرو اور اگر تم بیمار ہو یا حالتِ سفر میں ہو یا تم میں سے کوئی شخص استنجے سے آیاہو یا تم نے بیبیوں سے قربت کی ہو پھر تم کو پانی نہ ملے تو تم پاک زمین سے تیمم کرلیا کرو یعنی اپنے چہروں اور ہاتھوں پر ہاتھ پھیر لیا کرو اس(زمین پر) سے الله تعالیٰ کو یہ منظور نہیں کہ تم پر کوئی تنگی ڈالیں لیکن الله تعالیٰ کو یہ منظور ہے کہ تم کو پاک صاف رکھے اور یہ کہ تم پر اپنا انعام تام فرمادے تاکہ تم شکر ادا کرو۔ (سورة المَائدة ۶)

(5-Surah Al-Maeda : Ayah 6)

اور اے محمدﷺ آپ نماز کی پابندی رکھیئے دن کے دونوں سروں پر (یعنی اول و آخر میں) اور رات کے کچھ حصوں میں بیشک نیک کام (نامہٴ اعمال سے) مٹا دیتے ہیں برے کاموں کو یہ بات ایک (جامع) نصیحت ہے نصیحت ماننے والوں کے لیے۔ (سورة هُود ۱۱۴)

(11-Surah Hud : Ayah 114)

 

 

آپ فرما دیجیئے کہ خواہ الله کہہ کر پکارو یا رحمٰن کہہ کر پکارو جس نام سے بھی پکارو گے سو اس کے بہت اچھے اچھے نام ہیں اور اپنی نماز میں نہ تو بہت پکار کر پڑھیے اور نہ بالکل چپکے چپکے ہی پڑھیے اور دونوں کے درمیان ایک طریقہ اختیار کر لیجیئے۔ (سورة بنیٓ اسرآئیل / الإسرَاء ۱۱۰)

(17-Surah  Al-Isra : Ayah 110)

 

 

(وہ یہ ہے کہ) میں الله ہوں میرے سوا کوئی معبود نہیں تم میری ہی عبادت کرو اور میری ہی یاد کی نماز پڑھا کرو۔

(سُوۡرَةُ طٰه ۱۴)

 (20-Surah Ta-Ha : Ayah 14)

 

اور اپنے متعلقین کو بھی نماز کا حکم کرتے رہیئے اور خود بھی اس کے پابند رہیئے ہم آپ سے معاش (کموانا) نہیں چاہتے معاش تو ہم آپ کو دیں گے اوربہتر انجام تو پرہیز گاری ہی کا ہے۔ (سورة طٰه ۱۳۲)

(20-Surah Ta-Ha : Ayah 132)

 

بالتحقیق ان مسلمانوں نے آخرت میں فلاح پائی۔ (۱) جو اپنی نماز میں خشوع کرنے والے ہیں۔(۲) (سورة المؤمنون ۱ ۲)

(23- Al-Mumenoon : Ayah 1-2)

 

 

اور جو اپنی نمازوں کی پابندی کرتے ہیں۔ (۹) (پس) ایسے ہی لوگ وارث ہونے والے ہیں۔ (۱۰) جو فردوس کے وارث ہوں گے (اور) وہ اس میں ہمیشہ ہمیشہ رہیں گے۔ (سورة المؤمنون ۹ ۱۱)

(23-Surah Al-Mumenoon : Ayah 9-11)

 

 

جن کو الله کی یاد سے اور بالخصوص نماز پڑھنے سے اور زکوٰة دینے سے نہ خرید غفلت میں ڈالنے پاتی ہے اور نہ فروخت(اور) ایسے دن کی دارو گیر سے ڈرتے رہتے ہیں جس میں بہت سے دل اور بہت سی آنکھیں الٹ جاویں گی ۔ (سُوۡرَةُ النُّور۳۷)

 (24-Surah Al Noor : Ayah 37)

 

 

کیا تم نے نہیں دیکھا کہ آسمانوں اور زمین کے رہنے والے اور پرند جو پر پھیلائے اڑتے ہیں سب الله ہی کی تسبیح کرتے ہیں ہر ایک نے اپنی نماز اور تسبیح سمجھ رکھی ہے اور الله جانتا ہے جو کچھ وہ کرتے ہیں (سورة النُّور ۴۱)

(24-Surah  Al-Noor : Ayah 41)

 

 

جو کتاب آپ پر وحی کی گئی ہے آپ اسے پڑھا کیجیئے اور نماز کی پابندی رکھیے بے شک نماز (اپنی وضع کے اعتبار سے بے حیائی اور ناشائستہ کاموں سے روک ٹوک کرتی رہتی ہےاور الله کی یاد بڑی چیز ہے اور الله تعالیٰ تمہارے سب کاموں کو جانتا ہے۔ (سورة العَنکبوت ۴۵)

(29-Surah Al-Ankaboot : Ayah 45)

 

سوتم الله کی تسبیح کیا کرو شام کے وقت اور صبح کے وقت۔ (۱۷) اور تمام آسمان اور زمین میں اسی کی حمد ہوتی ہے اور بعد زوال اور ظہر کے وقت۔ (سورة الرُّوم ۱۷ ۱۸)

(30-Surah  Al-Room : Ayah 17-18)

 

 

جو نماز کی پابندی کرتے ہیں اور زکوٰة ادا کرتےہیں اور وہ لوگ آخرت کا پورا یقین رکھتے ہیں۔ (۴) یہ لوگ اپنے رب کے سیدھے راستے پر ہیں اور یہی لوگ فلاح پانے والے ہیں۔ (سورة لقمَان ۴۵)

(31- Surah Luqman : Ayah 4-5)

 

 

تو ا ن کی باتوں پر صبر کیجئے اور اپنے رب کی تسبیح وتحمیدکرتے رہئیے(اس میں نماز بھی داخل ہے ) آفتا ب نکلنے سے پہلے (مثلاصبح کی نماز) اور چھپنے سے پہلے (مثلا ظہرو عصر)۔ (۳۹) اور رات میں بھی اسکی تسبیح کیا کیجئے (اس میں مغرب اور عشاء آگئی) اور (فرض ) نمازوں کے بعد بھی۔ (سورة قٓ ۳۹ – ۴۰)

(50-Surah Qaf : Ayah 39-40)

 

اور رات میں بھی اسکی تسبیح کیا کیجئے (مثلاعشاء) اور ستاروں سے پیچھے بھی۔ (سورة الطُّور ۴۹)

(52-Surah At-Tur : Ayah 49)

 

 

اے ایمان والو جب جمعہ کے روز نماز (جمعہ ) کے لئے اذان کہی جایا کرے تو تم اللہ کی یاد (یعنی نماز وخطبہ ) کی طرف (فوراً) چل پڑا کرو اور خرید و فروخت (اور) اسیطرح دوسرے مشاغل جو چلنے سے مانع ہوں ) چھوڑ دیا کرو یہ تمہارے لئے زیادہ بہتر ہے اگر تم کو کچھ سمجھ ہو (کیونکہ اس کا نفع باقی ہے اور بیع وغیرہ کا فانی )۔ (۹) پھر جب نمازِ (جمعہ) پوری ہوچکے تو (اس وقت تم کو اجازت ہے کہ ) تم زمین پر چلو پھرو اور خدا کی روزی تلاش کرو․اور (اس میں بھی ) اللہ کو بکثرت یاد کرتے رہو تاکہ تم کو فلاح ہو ۔ (سورة الجُمُعَة ۹ ۱۰)

(62-Surah Al-Jumua : Ayah 9-10)

 

 

بیشک رات کے اٹھنے میں دل اور زبان کا خوب میل ہوتا ہے اور بات خوب ٹھیک نکلتی ہے ۔( سورة المُزمّل ۶)

(73-Surah Al-Muzzammil : Ayah 6)

 

 

با مراد ہوا جو شخص (قرآن سن کر خبائث عقائد و اخلاق سے) پاک ہو گیا۔ (۱۴) اور اپنے رب کا نام لیتا اور نماز پڑھتا رہا۔ (سورة الاٴعلی۱۴ ۱۵)

(87-Surah Al-Ala : Ayah 14-15)

 

(آگے پھر سزنش ہے کہ اس کو) ہرگز (ایسا) نہیں (کرنا چاہیے مگر) آپ اس کا کہنا نہ مانیے اور بدستور (نماز پڑھتے رہیے اور (خدا کا) قرب حاصل کرتے رہیے۔ (سورة العَلق ۱۹)

(96-Surah Al-Alaq : Ayah 19)

 

 

 (سو اس سے ثابت ہوا کہ) ایسے نمازیوں کے لیے بڑی خرابی ہے۔ (۴) جو اپنی نماز کوبھلا بیٹھتے ہیں (یعنی ترک کر دیتے ہیں)۔ (۵) جو ایسے ہیں کہ (جب نماز پڑھتے ہیں تو) ریاکاری کرتے ہیں۔ (۶) (سورة المَاعون ۴-۶)

(107-Surah Al-Maun : Ayah 4-6)

 

(خصوصی تعاون: سعدیہ اختر)
 
Leave a comment

Posted by on March 17, 2011 in Quran-Urdu category

 

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: